PK Press

چین کی جی ڈی پی 121 ٹریلین یوآن سے تجاوز کر گئی

 

چین کے قومی ترقیاتی و اصلاحاتی کمیشن کے ترجمان نے سال 2022 میں چین کی معاشی صورتحال کا تعارف کرواتے ہوئے کہا کہ 2022 میں چین کی معیشت نے بہتر شرح نمو، معیار میں اضافہ، مضبوط لچک اور ترقی کا رجحان دکھایا ہے۔بدھ کے روز

ترجمان نے کہا کہ 2022 میں چین کی جی ڈی پی 121 ٹریلین یوآن سے تجاوز کر گئی۔ معاشی ڈھانچے کو مسلسل بہتر بنایا گیا ہے، ترقی کے معیار کو مسلسل بلند کیا گیا ہے، اور خطرات اور چیلنجوں کا مقابلہ کرنے کی صلاحیت میں مسلسل اضافہ کیا گیا ہے.

بہت سی بین الاقوامی تنظیموں اور مارکیٹ اداروں نے حال ہی میں چین کی اقتصادی ترقی کی پیش گوئیوں میں اضافہ کیا ہے ۔ توقع کی جا رہی ہے کہ چین کی اقتصادی ترقی کی شرح 2023 میں تقریبا 5٪ یا اس سے بھی زیادہ ہو جائے گی۔ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کا ماننا ہے کہ عالمی معیشت میں مسلسل کساد بازاری کے تناظر میں، وبائی امراض کے بعد چین اس سال عالمی نمو کا سب سے بڑا محرک بن جائے گا۔

براہ کرم ہمیں فالو اور لائک کریں:

پڑھنے کے پچھلے

چین کی معاشی کارکردگی کے بارے میں بین الاقوامی شخصیات پرامید

پڑھنے کے اگلے

چین دنیا کی سب سے بڑی ترقی کی کہانی رہےگی، رپورٹ

ایک جواب دیں چھوڑ دو

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے