PK Press

چین دنیا کی سب سے بڑی ترقی کی کہانی رہےگی، رپورٹ

 

چینی حکومت کی پالیسیوں کے تحت چین واحد بڑی معیشت ہو سکتی ہے

بیجنگ ()

چین کے قومی ادارہ شماریات نے ،2022 کے قومی اقتصادی اعداد و شمار جاری کیے۔ ابتدائی حساب کے مطابق، چین کی جی ڈی پی گزشتہ سال 121 ٹریلین یوآن سے تجاوز کر گئی، جو پچھلے سال کے مقابلے میں 3.0 فیصد زیادہ ہے. متعدد غیر متوقع عوامل جیسے جغرافیائی سیاسی خلفشار، عالمی معیشت کے لئے بڑھتے ہوئے منفی خطرات، اور گھریلو وبائی امراض کے بار بار پھیلنے کے اثرات کے تحت، چین کی معیشت کے لئے دباؤ کا مقابلہ کرنا اور مجموعی طور پر ایک نئی بلندی تک پہنچنا آسان نہیں تھا.بدھ کے روز چینی میڈ یا کی ایک رپورٹ کے مطا بق

2022 میں ایک طرف چین کی معیشت معقول شرح نمو رکھے ہوئے تھی اور روزگار اور اشیا کی قیمتیں مجموعی طور پر مستحکم رہیں، تو دوسری طرف، چین کی اعلی معیار کی ترقی کو فروغ دینے کی رفتار برقرار رہی ۔

واشنگٹن پوسٹ کا کہنا ہے کہ ‘ ایسے اشارے مل رہے ہیں کہ چین کی معیشت زندہ ہو رہی ہے’۔ امریکہ کے جریدے بیرن کے تجزیہ نگار لیشما کپاڈیا کا خیال ہے کہ چینی حکومت کی متعلقہ پالیسیوں کے تحت چین واحد بڑی معیشت ہو سکتی ہے، جس سے 2023 میں کارپوریٹ منافع اور جی ڈی پی میں خاطر خواہ اضافہ متوقع ہے۔ آئی ایم ایف کی منیجنگ ڈائریکٹر کریسٹلینا جارجیوا نے بھی حال ہی میں کہا تھا کہ چین کی معیشت 2023 میں عالمی اقتصادی ترقی کو فروغ دینے میں سب سے اہم عوامل میں سے ایک ہو سکتی ہے۔ ایک حالیہ انٹرویو میں بین الاقوامی شہرت یافتہ کاروباری شخصیت اور سرمایہ کار لارس ٹویڈ نے کہا کہ چین اب بھی دنیا کی سب سے بڑی ترقی کی کہانی ہے۔

براہ کرم ہمیں فالو اور لائک کریں:

پڑھنے کے پچھلے

چین کی جی ڈی پی 121 ٹریلین یوآن سے تجاوز کر گئی

پڑھنے کے اگلے

چین مخالف گروپ کی جانب سے سنکیانگ کے حوالے سے مضحکہ خیز جھوٹی افواہ

ایک جواب دیں چھوڑ دو

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے