PK Press

رکن قومی اسمبلی علی وزیر کی درخواست ضمانت منظور

ali wazir

کراچی کی انسداد دہشت گردی عدالت نے رکن قومی اسمبلی علی وزیر کی درخواست ضمانت منظور کرلی۔

انسداد دہشت گردی عدالت نے علی وزیر کی درخواست ضمانت پر گزشتہ سماعت میں محفوظ کیا گیا فیصلہ سنایا۔

عدالت نے علی وزیرکی ایک لاکھ روپے میں ضمانت منظور کی ہے، علی وزیر کی3 مقدمات میں پہلے ہی ضمانت منظور ہوچکی ہے۔

پولیس کے مطابق علی وزیرکے خلاف بوٹ بیسن تھانے میں مقدمہ درج ہے۔

واضح رہے کہ علی وزیر کے خلاف کراچی کے ضلع جنوبی کے بوٹ بیسن تھانے میں مقدمہ درج ہے اور ان پر اشتعال انگیز تقریر کرنے کے الزامات ہیں۔علی وزیر کی اب تک چار مقدمات میں ضمانت منظور ہوچکی ہے۔

اس سے قبل سندھ ہائی کورٹ نے پی ٹی ایم کے رہنما اور رکن قومی اسمبلی علی وزیر کی ضمانت منظور کرتے ہوئے انہیں رہا کرنے کا حکم دے دیا تھا۔

رواں برس مئی میں سندھ ہائی کورٹ نے پی ٹی ایم کے رہنما علی وزیر کی درخواست ضمانت پانچ لاکھ روپے کے عوض منظور کی تھی۔

کراچی پولیس نے ایس ایچ او کے ذریعے ریاست کی مدعیت میں ان افراد کے خلاف ایف آئی آر درج کی تھی جس میں تعزیرات پاکستان کی دفعات 120 بی، 153 اے، 505 (2)، 188 اور 34 شامل کی گئی تھیں۔

بعد ازاں علی وزیر کو 16 دسمبر 2020 کو مبینہ طور پر اشتعال انگیز تقاریر کے الزام میں پشاور سے گرفتار کیا گیا تھا۔

صوبائی پولیس نے کہا تھا کہ علی وزیر کے خلاف ملک مخالف تقریر پر کراچی میں مقدمہ درج ہوا تھا اور سندھ پولیس نے محکمہ داخلہ خیبر پختونخوا کو ان کی گرفتاری کی درخواست کی تھی۔

جس کے بعد 19 دسمبر 2020 کو انہیں بذریعہ طیارہ کراچی لایا گیا تھا اور پھر نامعلوم مقام پر منتقل کردیا گیا تھا۔

کراچی کی انسداد دہشت گردی عدالت نے 20 دسمبر 2020 کو علی وزیر اور پی ٹی ایم کے دیگر تین رہنماں کو ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا تھا۔

جنوبی وزیرستان سے تعلق رکھنے والے رکن قومی اسمبلی علی وزیر 31 دسمبر 2021 سے کراچی کی مرکزی جیل میں قید ہیں۔عدالت میں پیش کی گئی رپورٹ کے مطابق علی وزیر کو پی ٹی ایم کے سربراہ منظور پشتین کی ہدایات پر ریلی نکالنے پر گرفتار کیا گیا تھا۔

براہ کرم ہمیں فالو اور لائک کریں:

پڑھنے کے پچھلے

سری لنکن ٹیم کا وطن واپسی پر شاندار استقبال

پڑھنے کے اگلے

پی ٹی آئی نے مرحلہ وار استعفوں کی منظوری سپریم کورٹ میں چیلنج کردی

ایک جواب دیں چھوڑ دو

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔