PK Press

چین کے چودہویں پانچ سالہ منصوبے کے دوران قابل تجدید توانائی کے ترقیاتی منصوبے کا اجرا

بیجنگ ()
چین کے چودہویں پانچ سالہ منصوبے کے دوران قابل تجدید توانائی کے ترقیاتی منصوبے کا
اجر ا ہوا جس میں واضح کیا گیا ہے کہ سال 2025 تک قابل تجدید توانائی کی کل کھپت ایک ارب ٹن سٹینڈرڈ کول تک پہنچ جائے گی جو توانائی کی بنیادی کھپت کا اٹھارہ فیصد بنے گی ۔قابل تجدید توانائِی کی کھپت میں اضافہ بنیادی کھپت میں اضافے کے پچاس فیصد سے زائد ہوگا۔جمعرات کے روز چینی میڈ یا کی مطا بق
توانائی کے قومی محکمے کے تحت ادارہ برائے نئی توانائی و قابل تجدید توانائی کے سربراہ لی چھانگ جون نے کہا کہ چودہویں پانچ سالہ منصوبہ بندی کے دوران نئی توانائی کی ترقی نئے مرحلے میں داخل ہوگی جس میں مارکیٹ اینٹٹیز کے کردار کو مزید بروئے کار لایا جائے گا اور مارکیٹ کی مدد سے نئی توانائی کی ترقی کی قوت تشکیل دی جائے گی۔
اطلاعات کے مطابق چودہویں پانچ سالہ منصوبہ بندی کے دوران چین میں بڑے پیمانے پر، قابل تجدید توانائی دریافت کی جائے گی اور اسے اعلی معیار کے ساتھ استعمال کیا جائے گا،جس کے ساتھ بجلی کی مستحکم فراہمی کو یقینی بنایا جائے گا۔منصوبےکے مطابق ،قابل تجدید توانائی کے نو زمینی بیسز اور ہوا سے چلنے والی بجلی کی پانچ بحری بیسز کی تعمیر کو تیز کیا جائے گا۔اس کے ساتھ متعلقہ نئی ٹیکنالوجی،نئے ماڈل اور نئی صنعتوں کو فروغ دیا جائے گا ۔

براہ کرم ہمیں فالو اور لائک کریں:

پڑھنے کے پچھلے

چین، 6.1 شدت کا زلزلہ، 4 افراد ہلاک، 14 زخمی

پڑھنے کے اگلے

چین، حیا تیاتی تحفظ کے حوالے سے نما یاں پیشر فت

ایک جواب دیں چھوڑ دو

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔