PK Press

ایک کروکر مچھلی نے ماہی گیر کو کروڑ پتی بنا دیا

Rare croaker fish caught off Jiwani coast

بلوچستان کے ساحلی ضلع گوادر سے ایک ایسی کروکر مچھلی پکڑی گئی ہے جو کہ ایک کروڑ 34لاکھ روپے سے زائد میں فروخت ہوئی۔برطانوی نشریاتی ادارے (بی بی سی) کے مطابق جانوروں کے تحفظ سے متعلق بین الاقوامی ادارے ڈبلیو ڈبلیو ایف کے ریسرچ ایسوسی ایٹ سدھیر بلوچ نے بتایا کہ یہ مچھلی جیونی کے علاقے سے پکڑی گئی۔ان کا کہنا تھا کہ اس مچھلی کا گوشت فی کلو دولاکھ 80ہزار روپے میں فروخت ہوا۔

 

مقامی صحافی کے مطابق اب تک یہ سب سے زیادہ قیمت پر فروخت ہونے والی کروکر مچھلی تھی۔چند روز قبل ماہی گیروں کی ایک ٹیم نے 18کروکر مچھلیاں پکڑی تھیں لیکن یہ مجموعی طور پر8لاکھ روپے تک فروخت ہوئی تھیں۔صحافی بہرام بلوچ کے مطابق یہ مچھلی جیونی کے علاقے سے پکڑی گئی تھی جو کہ ایرانی سرحد کے قریب ماہی گیروں کی ایک بستی ہے۔ماہرین کے مطابق اس مچھلی کو کر کر کی آواز کی وجہ سے کروکر کہا جاتا ہے جو کہ یہ اپنی مادہ کو آواز دینے یا دوسرے ساتھیوں سے رابطے کے لیے نکالتی ہے۔ اردو میں اس کا نام سوا ہے۔محکمہ فشریز کے کے مطابق ماضی میں کروکر مچھلی کے ایئر بلیڈر کو مقامی طور پر خشک کیا جاتا تھا اور بعد میں سری لنکا بھیجا جاتا تھا جو کہ بمشکل سو روپے میں بکتا تھا۔

 

کروکر مچھلی

 

فشریز کے سینیئر افسر نے بتایا کہ بعد میں کراچی میں فروخت کا سلسلہ شروع ہوا تو اس مچھلی کی قیمت پانچ ہزار روپے تک پہنچ گئی جو اب لاکھوں تک جا پہنچی ہے۔اب کولنگ ٹیکنالوجی کی وجہ سے کروکر کے ایئر بلیڈر کو یہاں نہیں نکالا جاتا بلکہ کراچی لے جایا جاتا ہے تاکہ یہ ضائع یا خراب نہ ہوں۔ڈبلیو ڈبلیو ایف کے ریسرچ ایسوسی ایٹکے مطابق مئی سے جون ان مچھلیوں کے عروج کا موسم ہوتا ہے۔یہ انڈے دینے کا وقت ہوتا ہے جس کے لیے ایران اور پاکستان کا درمیانی سمندری علاقہ موزوں ترین ہے اسی لیے یہ یہاں بڑی تعداد میں پکڑی جاتی ہیں۔لیکن اس مچھلی کا شکار بھی آسان نہیں۔ضروری نہیں کہ ہر ایک اس کے شکار میں کامیاب ہو۔ بعض ماہی گیر ایسے بھی ہوتے ہیں کہ مہینہ بھر اس کے شکار کی کوشش کرتے ہیں لیکن ان کو کامیابی نہیں ملتی۔انھوں نے بتایا کہ کروکر کے شکار کے مختلف طریقے ہوتے ہیں لیکن اس کی آواز کی مدد سے اس کی موجودگی کا پتہ چلایا جاتا ہے ۔ماہر شکاری اس پائپ کو سمندر میں ڈال کر اس کا دوسرا سرا اپنے کان سے لگا کر کروکر کی آواز سنتے ہیں۔ اس سے وہ اندازہ لگاتے ہیں کہ مچھلی کہاں اور کتنے فاصلے پر ہے اور کتنی تعداد میں ہے۔

https://pkpress.net/2022/05/12/the-rock-biggest-white-diamond/

 

براہ کرم ہمیں فالو اور لائک کریں:

پڑھنے کے پچھلے

یاسین ملک کی رہائی کےلئے عالمی سطح پر تحریک چلائیں گے،چودھری سرور

پڑھنے کے اگلے

پاکستانی کوہ پیماؤں کا کارنامہ، دنیا کی 5ویں بلند ترین چوٹی سرکرلی

ایک جواب دیں چھوڑ دو

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔