PK Press

پیٹرولیم مصنوعات پر سبسڈی کم کرنے کے لیے تیار ہیں،وزیر خزانہ

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک )وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے پیٹرولیم مصنوعات پر سبسڈی کم کرنے اور ایمنسٹی سکیم کو ختم کرنے کی آئی ایم ایف کی سفارشات سے اتفاق کیا ہے۔فرانسیسی میڈیا کے مطابق وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے بحران کا شکار معیشت کو سہارا دینے کے لیے انتظامی اصلاحات پر عمل کرنے کا عزم ظاہر کیا ہے۔

 

 

 

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف)نے 2019 میں پاکستان کے لیے تین سال کے دوران چھ ارب ڈالر کے قرض کی منظوری دی تھی تاہم اصلاحات کی رفتار سے متعلق خدشات کے باعث اس کی ادائیگی سست روی کا شکار ہوگئی۔وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل جنہوں نے رواں ماہ سابقہ حکومت کے خلاف تحریک عدم اعتماد منظور ہونے کے بعد یہ عہدہ سنبھالا، نے کہا ہے کہ ان کی آئی ایم ایف کے ساتھ سالانہ موسم بہار کی میٹنگ کے دوران اچھی بات چیت ہوئی ہے۔مفتاح اسماعیل نے واشنگٹن میں امریکی تھنک ٹینک اٹلانٹک کونسل سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے پیٹرولیم مصنوعات پر سبسڈی ختم کرنے کی بات کی ہے۔ میں ان سے اتفاق کرتا ہوں۔

 

عالمی ادارے نے پاکستانی معیشت کیلئے خطرے کی گھنٹی بجا دی

https://pkpress.net/2022/04/12/pakistani-economy/

 

انہوں نے کہا کہ ہم جو سبسڈی دے رہے ہیں اس کے متحمل نہیں ہو سکتے۔ اس لیے ہمیں اسے کم کرنا پڑے گا۔وزیر خزانہ نے کہا کہ سابق وزیراعظم عمران خان نے اقتدار سے محروم ہونے سے بچنے کے لیے اپنے جانشینوں کے لیے پیٹرولیم مصنوعات اور بجلی پر بھاری سبسڈی کے ساتھ ساتھ کاروباری اداروں کے لیے ٹیکس ایمنسٹی سکیم کے ذریعے ایک جال بچھایا۔مفتاح اسماعیل نے بتایا کہ پی ٹی آئی حکومت نے کارخانے لگانے کے لیے کاروباری اداروں کو چھوٹ دی تاکہ انہیں ٹیکس ادا نہ کرنا پڑے یا پھر بھی اگر وہ ٹیکس چوری کرتے ہیں تو یہ ٹھیک ہے۔تاہم ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کے غریب ترین افراد کے لیے کچھ ٹارگٹڈ سبسڈیز برقرار رہنی چاہییں۔وزیر خزانہ نے کہا کہ پاکستان کو رکاوٹوں کو ہٹا کر اور دنیا میں برآمدات کو فروغ دے کر ایک نئے معاشی ماڈل کی طرف بڑھنے کی ضرورت ہے۔

 

 

انہوں نے کہا کہ ہمارے یہاں سب سے زیادہ سبسڈی سے امیر ترین لوگ استفادہ کرتے ہیں۔مفتاح اسماعیل نے اس بات کی تردید کی کہ پاکستان اپنے قرضوں میں نادہندہ ہونے کے خطرے میں ہے۔ اس وقت غیر ملکی ذخائر 10 بلین ڈالر تک ہیں اور زیادہ تر قرضے دوست ممالک چین، سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات سے لیے گئے ہیں۔ان کا مزید کہنا تھا کہ صحیح کام کرنے کا کبھی غلط وقت نہیں ہوتا۔ اگر ہم جو دعوی کرتے ہیں وہ سچ ہے تو چند مہینوں میں فرق دیکھا جا سکے گا۔ اور اگر ہم ایسا نہیں کر پاتے تو ہمیں لوگ باہر پھینک دیں گے جو ٹھیک ہے۔

 https://jang.com.pk/category/latest-news

براہ کرم ہمیں فالو اور لائک کریں:

پڑھنے کے پچھلے

پاک افغان سرحد پار سے دہشتگردوں کی فائرنگ، 3 فوجی جوان شہید

پڑھنے کے اگلے

رانا غضنفر علی گھانا ہاکی ٹیم کے ہیڈ کوچ مقرر

ایک جواب دیں چھوڑ دو

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔