PK Press

روس نے یوکرائن میں جنگ چھیڑ دی

روس کا یوکرین میں فوجی آپریشن

یوکرین کے صدر نے روسی حملے کے بعد ملک میں مارشل لا نافذ کردیا۔یوکرائن میں ایک ماہ کیلئے ہنگامی حالت نافذ کرنے کا اعلان کر دیا گیا ہے۔ یوکرائن کی سکیورٹی کونسل کے سکریٹری اولیکسی ڈینیلوف کا کہنا ہے یوکرائن کی مشرقی سرحد پر روس کے ساتھ کشیدگی کے باعث ایمرجنسی نافذ کرنے کا اعلان کیا گیا ہے۔ اس فیصلے کے بعد یوکرائنی شہریوں کو کرفیو کے دوران گھروں میں رہنا ہو گا۔ یوکرائن کو اس وقت سنگین بحران کا سامنا ہے۔ روس کی جانب سے اس کی مشرقی ریاستوں کو تسلیم کیے جانے اور وہاں فوجی بھیجے جانے کے فیصلے نے روس اور یوکرائن کے مابین تنا مزید بڑھا دیا ہے۔

یوکرین کے وزیرخارجہ دیمترو کیلیبا نے بھی کہا ہے کہ روسی صدرنے یوکرین پرحملہ کردیا۔ غیر ملکی میڈیا کے مطابق یوکرینی وزیرخارجہ دیمترو کیلیبا نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر میں کہا ہے کہ روسی صدرولادی میرپیوٹن نے یوکرین پرپوری قوت سے حملہ کردیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ دارالحکومت کیف سمیت کئی شہروں پرحملے کئے گئے ہیں۔ دنیا صدرپیوٹن کوروکے۔ یہ عملی اقدامات کرنے کا وقت ہے۔ہم ہرقیمت پراپنے ملک کا دفاع کریں گے اورکامیاب ہوں گے۔

https://pkpress.net/2022/02/16/joe-biden/

روس کا یوکرین میں فوجی آپریشن

بین الاقوامی میڈیا رپورٹس کے مطابق دارالحکومت کیف، ڈونباس، اڈیسہ ماریوپول سمیت یوکرین کے مختلف شہروں میں دھماکوں کی زوردار آوازیں آرہی ہیں۔ روسی فوج نے یوکرین کے فوجی اڈوں کو بھی میزائل حملوں کا نشانہ بنایا

ہے۔

دوسری جانب یوکرین کے صدر زیلینسکی نے مارشل لا نافذ کرنے کا اعلان کردیا، صدر زیلینسکی کا کہنا ہے کہ روس نے ہمارے انفراسٹرکچر اورسرحدی محافظوں پر میزائل حملے کیے، یوکرین کے کئی شہروں میں دھماکوں کی آوازیں سنی گئیں۔
بین الاقوامی میڈیا کے مطابق روس نے 2 مارچ کے تک متعدد ہوائی اڈوں پر پروازیں عارضی طور پر معطل کر دیں ہیں۔ ماسکو ایکسچینج نے تمام مارکیٹوں میں تجارت معطل کردی ہے۔

 

https://pkpress.net/2022/02/14/ukraine-russia-crisis/یوکرینی وزیرخارجہ کے مطابق روس کی جانب سے یوکرین میں فوجی تنصیبات پر حملے جاری ہیں۔

امریکی صدر کا یوکرینی صدر سے رابطہ ہوا ہے، امریکی صدر کا کہنا ہے کہ جی سیون کے رہنما، امریکی اتحادی روس پر سخت پابندیاں عائد کریں گے، رابطے میں امریکہ کی یوکرین پر روسی فوجی دستوں کے بلا اشتعال اور بلاجواز حملے کی مذمت کی گئی ہے۔ بائیڈن نے یوکرینی صدر کو روس کے خلاف اٹھائے جانے والے اقدامات کے بارے میں بتایا، یوکرین اور اس کے شہریوں کی مدد جاری رکھیں گے۔

کینیڈین وزیراعظم جسٹن ٹروڈو نے روس سے یوکرین کے خلاف کارروائیاں بند کرنے کا مطالبہ کیا ہے، انہوں نے کہا کہ روس تمام فوجی اور پراکسی فورسز کو واپس بلائے، روس کے اقدامات کے سنگین نتائج برآمد ہوں گے، کینیڈا روس کی

بلاجواز جارحیت کو روکنے کے لیے اضافی کارروائی کرے گا۔

 

یہ بھی پڑھیں:
روس کا یو کرین پر حملہ، تیل اور سونے کی قیمتیں بڑھ گئیں
روس کی جانب سے یو کرین پر حملے کے بعد تیل اور سونے کی قیمتیں بڑھ گئیں،اسٹاک مارکیٹیں کریش کر گئیں۔غیر ملکی میڈیا کے مطابق روس کے یوکرین پر حملے کے بعد عالمی منڈی میں تیل 100 ڈالر فی بیرل سے تجاوز کر گیا۔جبکہ سونے کی فی اونس قیمت 16 ڈالر بڑھ گئی ہے۔عالمی اسٹاک ایکسچینجز میں بھی شدید مندی دیکھنے میں آرہی ہے۔ جاپان، آسٹریلیا، چین، سنگاپور اور دیگر اسٹاک ایکسچینجز میں 3 فیصد تک مندی دیکھی گئی۔یوکرین پر روسی حملے کے بعد کرپٹو کرنسی ٹریڈنگ بھی شدید مندی کی زد میں آگئی۔ بٹ کوائن کی قدر 6 فیصد سے زائد گر کر 35200 ڈالر کی سطح پرپہنچ گئی ہے

مزید پڑھیں:
برطانوی وزیر اعظم بورس جانسن نے کہا ہے کہ روسی صدر نے یوکرین پر بلا اشتعال حملہ کرکے خونریزی اور تباہی کا راستہ چنا ہے۔غیرملکی میڈیا کے مطابق برطانوی وزیر اعظم بورس جانسن نے کہا کہ وہ یوکرین میں ہونے والے ہولناک واقعات سے خوفزدہ ہیں۔انہوں نے کہا کہ روسی صدر ولادیمیر پیوٹن نے بلااشتعال حملہ کرکے خونریزی اور تباہی کا راستہ چنا ہے جبکہ اس حوالے سے یوکرینی صدر سے بات کی ہے کہ کس طرح جواب دیں۔بورس جانسن نے کہا کہ انہوں نے یوکرین کے صدر سے برطانیہ اور اتحادیوں کی جانب سے فیصلہ کن کارروائی کا وعدہ کیا ہے۔

براہ کرم ہمیں فالو اور لائک کریں:

پڑھنے کے پچھلے

سنجے دت کی نئی فلم کی پہلی جھلک سامنے آگئی

پڑھنے کے اگلے

اسلام آباد کا نام کس نے تجویز کیا تھا؟

ایک جواب دیں چھوڑ دو

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔