PK Press

ایروپونک ٹیکنالوجی کے ذریعے پاکستان میں پہلی مرتبہ آلو کا وائرس سے پاک بیج تیار

پاکستان میں پہلی مرتبہ کورین حکومت کے تعاون سے قومی تکنیک کے ذریعے وائرس سے پاک آلو کے بیچ تیار کر لیا گیا،فصل 31جنوری کو کاٹی جائے گی ، اس حوالے سے اسلام آباد میں منعقدہ تقریب میں پاکستان میں کوریا کے سفیر ،کورین ادارہ(کے او پی آئی اے) کے عہدیدران اورچیئرمین پی اے آر سی سمیت دیگر افسران نے شرکت کی ۔تفصیلات کے مطابق اس موقع پر تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چیئرمین پی اے آر سی نے کہا کہ ایروپونک تکنیک کے ذریعے وائرس سے پاک آلو کے بیج کی ضرب کی خود کفالت پر پی اے آر سی نے کوریا کی حکومت کے ساتھ ایروپونک ٹیکنالوجی کے ذریعے وائرس سے پاک آلو کے بیج کی بڑے پیمانے پر پیداوار کی تلاش کی ،این ار آر سی میں ایروپونک گرین ہاو س کے ذریعہ تیار کردہ 65,000 آلو ٹیوب آلو دنیا کی ایک اہم نقد آور فصل ہے اور پاکستان بھر میں 194 ہزار ہیکٹر رقبے پر بھی وسیع پیمانے پر کاشت کی جاتی ہے جس کی سالانہ پیداوار 4.59 ملین ٹن ہے جس کی اوسط پیداوار 23.6 ٹن فی ہیکٹر ہے۔انہوں نے کہا کہ آلو کی فی ہیکٹر پیداوار کئی وجوہات کی بنا پر دیگر ممالک کے مقابلے نسبتا کم ہے۔ صحت مند بیج کی دستیابی کو واحد بڑی رکاوٹ کے طور پر تسلیم کیا گیا ہے جو پاکستان میں اس کی پیداوار کو محدود کر رہا ہے۔پاکستان میں 415000 ملین ٹن کی کل ضرورت کے مقابلے میں اچھے معیار کے بیج کی ضرورت کو صرف 1 فیصد پورا کرنے کی صلاحیت ہے۔ ٹشو کلچر کی صنعت کی عالمی اہمیت اور دنیا بھر میں پیداوار اور انتظامی حکمت عملیوں میں اس کی کامیابیوں کی وجہ سے اس جدید ٹیکنالوجی کو پاکستان کے آلو کے کاشتکاروں تک پہنچانا اور پھیلانا انتہائی ضرورت بن گیا ہے۔اچھے معیار کے آلو کے بیج کی قلت کے مسئلے سے نمٹنے کے لیے نیشنل انسٹی ٹیوٹ فار جینومکس اینڈ ایڈوانس بائیوٹیکنالوجی (این آئی جی اے بی)نے ہارٹیکلچرل ریسرچ انسٹی ٹیوٹ (ایچ آر آئی)، کراپ ڈیزیز ریسرچ انسٹی ٹیوٹ (سی ڈی آر آئی)اور ایگریکلچرل انجینئرنگ انسٹی ٹیوٹ (اے ای آئی)کے ساتھ شراکت داری کو اپنایا۔ کورین پروگرام برائے بین الاقوامی زراعت (کے او پی آئی اے )کے تحت پاکستان میں زرعی ترقی کے لیے کورین حکومت کے تعاون سے ٹشو کلچر اور ایروپونک تکنیک کے ذریعے پاکستان میں آلو کے بیج کی پیداوار کی جدید ترین ٹیکنالوجی نے "ایروپونک تکنیک کے ذریعے وائرس سے پاک آلو کے بیجوں کی خود کفالت” کے عنوان سے منصوبہ شروع کیا۔ اس پروجیکٹ کے تحت تکنیکی تعاون پراجیکٹ یکم جنوری 2021 سے 31 دسمبر 2023 تک تین سال کی مدت کے لیے کارآمد رہے گا۔ اس منصوبے کا مقصد تجارتی لحاظ سے اہم آلو کے جراثیم کی نشوونما، آلو کی منتخب اقسام کی بیماری سے پاک مائکرو پروپیگیشن اور ان کا حصول ہے۔ ایروپ کے ذریعے وائرس سے پاک نیوکلئس بیج کی پیداوار اسکرین ہاو سز کے نیچے معیاری بیج کی ضرب کے لیے بیک وقت وائرس انڈیکسنگ کے ساتھ اونک کاشت۔اس ٹیکنالوجی کا مقصد پاکستان میں آلو کے بیج میں خود کفالت حاصل کرنے کے لیے کورین پروگرام برائے بین الاقوامی زراعت کی مدد سے ٹشو کلچر اور ایروپونک تکنیک کو اپنا کر اور استعمال کرکے آلو کے پیداواری نظام میں انقلاب لانا ہے۔مٹی یا سبسٹریٹ کی مدد کے بغیر باریک بوندوں کی مدد سے اگائے جانے والے آلو کے پودوں کے لیے متبادل ایروپونک تکنیکوں کی دستیابی ایک نئی امید ہے۔ یہ اعلی ترقی کی شرح اور صحت مند، یکساں اور مضبوط آلو کے کندوں کی اجازت دیتا ہے۔ اس کی وجہ سے، آلو کی پیداوار زیادہ موثر ہو جاتی ہے اور آلو کے بیج کی ضرب میں سائیکلوں کی تعداد کم ہو جاتی ہے اس طرح صحت اور معیار کو لاحق خطرات بھی کم ہو جاتے ہیں۔ پاکستان میں خود کفالت حاصل کرنے کے لیے جلد ہی آلو کا پیداواری نظام ایروفونک تکنیک کا استعمال کرتے ہوئے انقلابی ہو سکتا ہے۔ایروپونک سہولت سے پہلے سال کے دوران 65,000 نیوکلئس ٹبروں کی کٹائی متوقع ہے اور تین سالوں میں 40,000 ٹن تصدیق شدہ بیج تیار کیے جائیں گے جو 40-50(000) ایسرز کے پودے لگانے کے لیے کافی ہوں گے۔ یہ بیماری سے پاک تصدیق شدہ صحت مند بیج کسانوں کی فی ایکڑ پیداوار میں 15-20% زیادہ کا بیمہ کرے گا۔

براہ کرم ہمیں فالو اور لائک کریں:

پڑھنے کے پچھلے

بھارت کا پی آئی اے کو جے پور کیلئے پرواز کی اجازت دینے سے انکار

پڑھنے کے اگلے

چین اور وسطی ایشیا کے پانچ ممالک کے تعلقات کا فروغ

ایک جواب دیں چھوڑ دو

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔