PK Press

مشاہد حسین سید کو بھی کورونا ہو گیا

ڈی جی نیب حسنین احمد نے کہا ہے کہ کرپشن کی رقم واپس کرنے والے کچھ افسران اب بھی حاضر سروس ہیں۔تفصیلات کے مطابق پارلیمنٹ ہاوس اسلام آباد میں رانا تنویر حسین کی زیر صدارت پبلک اکاونٹس کمیٹی کااجلاس ہوا۔اجلاس کے دوران ڈی جی نیب حسنین احمد نے کمیٹی کو بتایا کہ چیئرمین نیب کمیٹی کے سامنے پیش ہونے کے لیے تریار تھے لیکن انہیں کورونا ہو گیا ہے۔جس پر چیئر مین پی اے سی رانا تنویر نے کہا کہ مشاہد حسین سید کو بھی کورونا ہو گیا ہے۔ ارکان فیصلہ کر لیں ڈی جی نیب سے بریفنگ لینی ہے یا نہیں۔ڈی جی نیب حسنین احمد نے کمیٹی کو بتایا کہ نیب نے اپنے قیام سے اب تک 821 ارب 57 کروڑ روپے کی ریکوری کی ہے۔حسنین احمد نے بتایا کہ ہاوسنگ سوسائٹیوں سے 17 ارب 49 کروڑ روپے کی ریکوری کی گئی۔ ہاوسنگ سوسائٹیوں کے 99 ہزار 595 متاثرین کو رقم واپس کی گئی۔ڈی جی نیب نے بتایا کہ ادارے نے فراڈ اسکیموں کے ذریعے لوٹی گئی 7ارب 44 کروڑ روپے کی رقم وصول کی گئی۔فراڈ اسکیموں کے متاثرین کی تعداد 66 ہزار 390 ہے۔حسنین احمد نے مزید بتایا کہ نیب نے 500 ارب روپے کی بلواسطہ جب کہ 76 ارب روپے کی براہ راست ریکوری کی، پلی بارگین کے نتیجے میں 50 ارب روپے کی وصولیاں کی گئیں، کرپشن کیسز میں 26 ارب روپے رضاکارانہ طور پر واپس کیے گئے۔ڈی جی نیب نے بتایا کہ پلی بارگین حاصل کرنے والے سرکاری افسر کو دوبارہ ملازمت پر نہیں رکھا جاتا، رضاکارانہ طور پر رقم واپس کرنے والے کچھ افسران اب بھی حاضر سروس ہیں۔

براہ کرم ہمیں فالو اور لائک کریں:

پڑھنے کے پچھلے

ٹوپیاں اور بوٹ پہن کر پھرنے والوں کو غریبوں کا کیا پتہ،وزیراعظم عمران خان

پڑھنے کے اگلے

شہزادی ثانیہ کی منگنی کی رنگ ونور سے بھرپور تقریب

ایک جواب دیں چھوڑ دو

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے