PK Press

سی پیک منصوبوں پر پیشرفت کی مانیٹرنگ کے لیے ویب پورٹل کا آغاز کر دیا گیا

  سی پیک منصوبوں پر پیشرفت کی مانیٹرنگ کے لیے ویب پورٹل کا آغاز کر دیا گیا ، ویب پورٹل کو صارفین کہیں سے بھی آسانی سے براؤز کر سکتے ہیں، سی پیک منصوبوں کے علاوہ، وقف شدہ پورٹل کو دیگر منصوبوں کی نگرانی کے لیے بھی استعمال کیا جا سکتا ہے۔گوادر پرو کے مطابق پاکستان اسپیس اینڈ اپر ایٹموسفیئر ریسرچ کمیشن (سپارکو) نے وزارت منصوبہ بندی کے ساتھ مل کر ایک ویب پورٹل اور موبائل ایپلیکیشن تیار کی ہے جس سے چین پاکستان اقتصادی راہداری (سی پیک) کے مختلف منصوبوں پر ہونے والی پیشرفت کی نگرانی کی جا سکتی ہے۔ ایک سرکاری بیان کے مطابق سپارکو نے مقامی طور پر تیار کردہ موبائل ایپلیکیشن کے ساتھ اس صلاحیت کو پورا کیا ہے جسے پلاننگ کمیشن آف پاکستان کا صارف اپنے سیل فون پر انسٹال کر سکتا ہے اور سی پیک منصوبوں پر پیش رفت مانیٹر کر سکتا ہے۔ ویب پورٹل کو صارفین کہیں سے بھی آسانی سے براؤز کر سکتے ہیں، آرڈر دے سکتے ہیں اور اپنے ڈیسک ٹاپ سے سیٹلائٹ امیجری کو براہ راست ڈاؤن لوڈ کر سکتے ہیں۔ یہ پیشہ ور افراد کے لیے جدید ترین امیجنگ کے اختیارات کے ساتھ جدید ترین پورٹل ہے۔ سی پیک منصوبوں کے علاوہ، وقف شدہ پورٹل کو دیگر منصوبوں کی نگرانی کے لیے بھی استعمال کیا جا سکتا ہے۔گوادر پرو کے مطابق ویب پورٹل اور موبائل ایپ کی لانچنگ تقریب پاکستان پلاننگ اینڈ مینجمنٹ انسٹی ٹیوٹ اسلام آباد میں منعقد ہوئی۔ افتتاحی تقریب میں وفاقی وزیر اسد عمر، سپارکو کے چیئرمین میجر جنرل عامر ندیم، وزارت منصوبہ بندی کے سینئر افسران اور سرکاری و نجی شعبوں کے اسٹیک ہولڈرز نے شرکت کی۔ گوادر پرو کے مطابق اسد عمر نے کہا کہ سیٹلائٹ سسٹم کو ”منصوبوں کی مقداری اور معیاری حالت کی نگرانی کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے اور یہ کہ اسے پراجیکٹ مینجمنٹ کے ساتھ کتنی اچھی طرح سے مربوط کیا جا سکتا ہے،” انہوں نے مزید کہا کہ سیٹلائٹ ٹیکنالوجی نے مواصلات کو بہتر بنایا اور بروقت فیصلوں کے قابل بنا کر ممکنہ مسائل کی تشخیص میں مدد کی۔ سپارکو کے چیئرمین میجر جنرل عامر ندیم نے پاکستان ریموٹ سینسنگ سیٹلائٹ 1 کی اہمیت پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ اس نے ملک کی سماجی و اقتصادی ترقی اور مانیٹرنگ چیلنجز سے نمٹنے کے لیے قوم کو خود کفیل بنایا ہے۔ گزشتہ ماہ اسد عمر نے کہا تھا کہ پلاننگ کمیشن میں مانیٹرنگ اینڈ ایویلیوایشن (پی اینڈ ای) کا کمزور نظام ہمیشہ پی ایس ڈی پراجیکٹس پر عمل درآمد میں تاخیر/غیرفعالیت کا باعث بنتا ہے جس کی وجہ سے بڑے پیمانے پر اخراجات، لاگت میں اضافہ اور ٹیکس دہندگان کے پیسے کا ضیاع ہوتا ہے۔ وقف ویب اور موبائل ایپلیکیشن کا تعارف کمیشن کو مختلف منصوبوں کی نگرانی اور بروقت تکمیل میں مدد کرے گا۔

براہ کرم ہمیں فالو اور لائک کریں:

پڑھنے کے پچھلے

چین اور ترکی کا ثقافتی تبادلوں کو مضبوط بنانے پر اتفاق

پڑھنے کے اگلے

فخرِ پاکستان ارفع کریم رندھاوا کوبچھڑے 9برس بیت گئے

ایک جواب دیں چھوڑ دو

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔